قرآن اور اہل بيت عليہم السلام
logo512-articles

Abstract

By قرآن اور اہل بيت عليہم السلام

سرکار دو عالم نے ہدايت امت کے لئے دو گرانقدر چيزيں چھوڑى ہيں،”قرآن اور اہل بيت عليہم السلام” اور ان دونوں کا کمال اتحاد يہ ہے کہ اہل بيت عليہم السلام کى پورى زندگى ميں قرآن مجيد کے تعليمات کى تجسيم ہے اور قرآن کى جملہ آيات ميں اہل بيت عليہم السلام کى زندگي کى تصوير ديکھى جاسکتى ہے۔ کہيں ان کے کردار کى توقير ہے تو کہيں ان کے دشمنوں کي تحقير،کہيں ان کے مستقبل کى تمہيد ہے تو کہيں ان کے ماضى کي تمجيد۔

ليکن اس کے باوجود اقوال مفسرين و محدثين کى روشنى ميں تقريباً ۳۰۰آيات صرف انھيں کى شان ميں نازل ہوئى ہيں۔

قرآن اور اہل بيت عليہم السلام

ذيل ميں اردو داں حضرات کے لئے اس ذخيرہ کو يکجا پيش کرنے کے لئے مذکورہ آيات کا ايک خلاصہ پيش کيا جا رہا ہے۔ تفصيلات کے لئے مجلدات کى ضرورت ہے۔

آيات بينات

اسلامى روايات کى بنا پر قرآن مجيد کى بے شمار آيات ہيں جو اہل بيت اطہارعليہم السلام کے فضائل و مناقب کے گررد گھوم رہى ہيں اور انہيں حضرات معصمومينعليہم السلام کے کردار کے مختلف پہلووٴں کى طرف اشارہ کر رہى ہيں بلکہ بعض روايات کى بنا پر تو کل قرآن کا تعلق ان کے مناقب، ان کے مخالفين کے نقائص ومثالب، ان کے اعمال و کردار اور ان کى سيرت و حيات کے آئين و دستور سے ہے ليکن ذيل ميں صرف ان آيات کى طرف اشارہ کيا جا رہا ہے جن کى شان نزول کے بارے ميںعام مسلمان مفسرين بھى اقرار کيا ہے کہ ان کا نزول اہل بيت اطہارعليہم السلام کے مناقب اى ان کے مخالفين کے نقائص کے سلسلہ ميں ہوا ہے۔

علماء حق نے اس سلسلہ ميں پورى پورى کتابيں تاليف کى ہيں اور مکمل تفصيل کے ساتھ آيات اور ان کى تفسير کا تذکرہ کيا ہے ليکن اس کام پر صرف ايک اقتباس درج کيا جا رہا ہے تاکہ اردو داں طبقہ کے ذہن ميں بھى يہ آيات اور ان کے حوالے رہيں اور زير نظر کتاب کى عظمت و برکت ميں اضافہ ہو جائے۔

۱۔ "اہدنا الصراط المستقيم” (خدايا ہميں صراط مستقيم کى ہدايت فرما)۔ يہ محمد و آل محمد کا راستہ ہے۔

شواہد التنزيل ج/۱ص/ (۵۱)

۲۔ ” ہديً للمتقين الذين يومنون بالغيب” (قرآن ان متقين کے لئے ہدايت ہے جو غيب پر ايمان رکھتے ہيں) (بقرہ/۲۔۳)

يہ ان مومنين کا ذکر ہے جو محبت قائم آل محمد پر قائم رہيں۔ رسول اکرم(ينابيع المودّة ص/۴۴۳)

۳۔ "وبشر الذين آمنو و عملوا الصالحات ان لہم جنّات تجرى من تحتہا الانہار”۔(بقرہ۔۲۵)

پيغمبر آپ صاحبان ايمان و عمل کو بشارت دے ديں کہ ان کہ لئے وہ جنّتيں ہيں جن کے نيچے نہريں جارى ہوگي۔

)شواہد التنزيل(

۴۔ "فتلقيٰ ادم من ربّہ کلمات فتاب عليہ”۔ (بقرہ۔۳۷)

آدم عليہم السلام نے پروردگار سے کلمات حاصل کرکے ان کے ذريعہ توبہ کي۔ (غاية المرام ص/۳۹۳)

۵۔ "واذ قلنا ادخلوا ہٰذہ القرية فکلو منہا حيث شئتم رغداً و ادخلوا الباب سجّداً و قولوا حطة نغفر لکم خطٰيا کم”

۔(بقرہ۔۵۸)

اہل بيت عليہم السلام کى مثال سفينہٴ نوح اورباب حطّہ کى ہے۔پيغمبراکرم۔(درمنثور،ج ۱)

۶۔ "واذ استسقيٰ موسيٰ لقومہ فقلنا اضرب بعصاک الحجر فانفجرت منہ اثنتا عشرة عيناً” (بقرہ۔(۶۰

ميرے بعد آئمہ کى تعداد يہى بارہ ہوگى جو قوم کا سرچشمہ ہوگي۔پيغمبر اکرم۔ (غاية المرام ص/۲۴۴)

۷۔ "واذا بتليٰ ابرہيم ربہ بکلماتٍ فاتمہن” (بقرہ۔۱۲۴)

يہ آئمہ اثنا عشر کا اقرار ہے۔ امام جعفر صادق (ينابيع المودة ص/۲۵)

٨ ۔ "وما انزل اليٰ ابراہيم و اسماعيل واسحٰق و يعقوب والاسباط” (بقرہ /(۱۳۶

حسين عليہم السلام اس مت کے اسباط ميں ہيں۔ رسول اکرمعليہم السلام۔ (اسد الغابہ ج/۲،ص/۱۴۳)

۹۔ "کذٰلک جعلناکم امة وسطا لتکونوا شہداء على الناس” (بقرہ۔۲۰۸)

امت وسط ہم اہل بيتعليہم السلام ہيں۔ امير المومنينعليہم السلام۔(شواہد التنزيل ج/۱،ص/(۹۲

۱۰۔ "فاستبقوا الخيرات اين ما تکونوا يات بکم اللہ جميعاً۔”(بقرہ۔۱۴۸)

يہ امام مہديعليہم السلام کے ۳۱۳اصحاب کى طرف اشارہ ہے۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ (ينابيع المودّة، ص/۵۰۵)

۱۱۔”يا ايہا الذين ادخلوا فى السلم کافة۔” (بقرہ۔(۲۰۸

يہ ہم اہل بيتعليہم السلام کى ولايت ہے۔ حضرت عليعليہم السلام۔ (غاية المرام،ص/(۴۳۸

۱۲۔ "فمن يکفر بالطاغوت و يومن باللہ فقد استمسک بالعروة الوثقيٰ۔”(بقرہ (۲۵۶

عروة الوثقى اور انکى اولاد ہے۔ رسول اکرم۔(غاية المرام، ص/(۲۴۴

۱۳۔”يوٴتى الحکمة من يشاء و من يوٴت الحکمة فقد اوتى خيراً کثيراً۔”(بقرہ۔ ۲۶۹)

پروردگار نے حکمت ہم اہل بيتعليہم السلام کے اندر قرار دى ہے۔ رسول اکرم۔ (ينابيع المودة،ص/۴۵)

۱۴۔”وما يعلم تاويلہ الا اللہ والراسخون فى العلم۔” (آل عمران۔۷)

راسخون فى العلم ہم اہل بيتعليہم السلام ہيں۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ (ينابيع المودة، ص/۱۳۹)

۱۵۔ "ان اللہ اصطفى آدم و نوحاً و آل ابراہيم و آل عمران على العالمين۔”(آل عمران۔۳۳)

مصحف عبد اللہ ميں اس کى تفسير آل محمد سے کى گئى تھي۔ ابو وائل۔(غاية المرام، ص/۳۱۸)

۱۶۔ "فمن حاجک فيہ من بعد مان جاء ک من العلم فقل تعالوا ندع ابنائنا و ابنائکم۔”(آل عمران ۶۱)

يہ آيت مباہلہ کے موقع پر اہل بيتعليہم السلام کى شان ميں نازل ہوئي۔

تفسير جلالين، صحيح مسلم کتاب فضائل الصحابة، غاية المرام، ص۳۰۰وغيرہ

۱۷۔ "ولہ اسلم من فى السموات وا لارض طوعاً و کرہاً۔” (آل عمران۔۸۳)

يہ قيام مہديعليہم السلام کى طرف اشارہ ہے۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ (ينابيع المودة م،ص/۳۲۱)

۱۸۔ "و من يعتصم باللہ فقد ہدى الى صراط مستقيم۔” (آل عمران۔۱۰۱)

علي، ان کى زوجہ اور ان کى اولاد حجت خدا ہے۔ ان سے ہدايت حاصل کرنے والا صراط مستقيم کى طرف ہدايت پانے والا ہے۔ رسول اکرم۔ (شواہد التنزيل،۱،ص/۵۸)

۱۹۔ "واعتصموا بحبل اللہ ولا تفرقوا۔” (آل عمران ۔۱۰۳)

حبل اللہ سے مراد ہم اہل بيت ہيں۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ ( شواہد التنزيل،۱،ص/۱۳۱)

۲۰۔ "يا ايہا الذين آمنو ا اصبروا وصابروا و رابطوا واتقوا اللہ لعلکم تفلحون” (آل عمران۔۲۰۰)

مرابطہ امام مہديعليہم السلام کے ساتھ جہاد کي تيارى کا حکم ہے۔ امام محمد باقرعليہم السلام۔

ينابيع المودة،ص/۵۰۶

۲۱۔ "اٴم يحسدون الناس على ما اٰتاہم اللہ من فضلہ فقد اٰتينا آل ابراہيم الکتاب والحکمة و آتيناہم ملکاً عظيماً۔” (نساء ۵۴)

يہ محسود افراد ہم اہل بيتعليہم السلام ہيں۔ امام محمد باقرعليہم السلام۔ (اسعافالراغبين،ص۱۰۹، نور الابصار،ص۱۱۲)

۲۲۔ "يا ايہا الذين آمنوا اطيعوا اللہ و اطيعوا الرسول و اولى الامر منکم۔” (نساء۔ ۵۹)

اولى الامر سے مراد آئمہ اہل بيتعليہم السلام ہيں۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ (ينابيع المودة، ص/۱۹۴)

۲۳۔ "ومن يطع اللہ و الرسول فاولئک مع الذين انعم اللہ عليہم من النبيين و الصديقين والشہداء و الصالحين وحسن اولئک رفيقاً۔”(نساء۔۶۹۔۷۰)

صديقين،شہداء اور صالحين عليعليہم السلام او ر ان کے مخلصين ہيں۔ابن عباس۔ (شواہد التنزيل،۱،ص/۱۵۴)

۲۴۔ "ولوردوہ الى الرسول واليٰ اولى الامرمنھم لعلمہ الذين يستنبطونہ منھم”۔(نساء۸۳)

اولى امر سے مراد ائمہ اہلبيت عليہم السلامہيں۔امام محمد باقر عليہم السلام،امام جعفر صادق عليہم السلام۔

ينابيع المودة۳۲۱

۲۵۔”و ان من اہل الکتاب الّاليومننّ بہ قبل موتہ”۔(نساء۱۵۹)

ظہور مہدى عليہم السلام کى طرف اشارہ ہے۔امام محمد باقر عليہم السلام۔(ےنابےع المودة۵۰۶)

۲۶۔”ےا ايّہاالذين اٰمنوالاتحلواشعائراللّٰہ”۔(مائدہ۲)

ہم شعائر اللہ اور اصحاب ہيں۔حضرت على عليہم السلام۔ (ےنابےع المودة۲۱۳)

۲۷۔”و لقد اخذاللّٰہ ميثاق بنى اسرائيل وبعثنامنھم اثنى عشرنقےباً”۔(مائدہ۱۲)

ائمہ اہلبےت عليہم السلامکى تعداد نقباء بنى اسرائيل کے برابر ہے۔رسول اکرم۔

غاية المرام۲۴۴

۲۸۔ "يا ايھا الذين اٰمنوااتقوااللّٰہ وابتغوااليہ الوسيلة”۔(مائدہ ۳۵)

ميرى اولاد کے ائمہ ہى عروةالوثقيٰ اور وسيلہ الى اللہ ہيں۔رسول اکرم۔ (ےنابيع المودة۴۴۶)

۲۹۔ "فسوف ياتى اللّٰہ بقوم يحبہم ويحبونہ اذلة على المومنين اعزةعلى الکافرين”۔(مائدہ۵۴)

يہ اصحاب مہديعليہم السلام کى طرف بھى ايک اشارہ ہے۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔(ينابيع المودة(

۳۰۔ "وھدےنٰھم اليٰ صراط مستقےم”۔(انعام۸۷)

آل محمد ہى در اصل صراط مستقےم ہيں ۔امام محمد باقر عليہم السلام۔ (شواہد التنزےل۱ص(۶۱

۳۱۔ "فان ےکفر بھاھٰوٴلاء فقد وکلنابھاقوماًليسوابھابکافرين”۔(انعام۸۹)

اصحاب حضرت قائم عليہم السلامکى طرف اشارہ ہے۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔ (ينابيع المودة(۵۰۷

۳۲۔ "و تمّت کلمةربکصدقاوعدلاًلامبدل لکلماتہ و ھو السميع العليم”۔(انعام۱۱۵)

يہ کلمہ ہر امام کے بازوپر لکھا ہو تا ہے۔امام حسن عسکرى عليہم السلام۔(ينابيع المودة۴۶۲)

۳۳۔ "وان ھذاصراطى مستقےماًفاتبعوہ”۔(انعام۱۵۳)

عليعليہم السلام بن ابيطالب اور ان کى ذرّيت کا راستہ ہى صراط مستقےم ہے۔حسن بصري۔ (غاےة المرام ص۴۳۴)

۳۴۔ "فلنسئلن الذين ارسل اليہم ولنسئلن المرسلين”۔(اعراف(۶

قےامت کے دن عمر،جسم،مال اور محبت اہلبےت عليہم السلامکے بارے ميں سوال کيا جائے گا۔رسول اکرم۔

غاےة المرام س۲۶۱

۳۵۔ "و على الاعراف رجال ےعرفون کلا بسيماھم”۔ (اعراف۴۶)

يہ ہم اہلبيت عليہم السلامہوںگے۔الامام عليعليہم السلام بن ابى طالب۔

غاےةالمرام ص۳۵۴

۳۶۔ "و ممن خلقناامةيھدون بالحق وبہ ےعدلون”۔(اعراف ۱۸۱)

يہ آيت آل محمدکے بارے ميں ہے۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔

شواہد التنزےل۱ص۲۰۴

۳۷۔ "يسئلونک عن الساعةايان مرسٰھا”۔(اعراف۱۸۷)

ساعت سے قےام قائم آل محمدمراد ہے۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔

ےنابےع المودة

۳۸۔ "و ما کان اللّٰہ ليعذبہم وانت فيہم”۔(انفال ۳۳)

اہلبےت عليہم السلامنہ رہ جائيں گے تو زمين فنا ہو جائے گي۔رسول اکرم۔

اسعاف الراغبےن بر حاشيہ نور الابصارص۱۳۰

۳۹۔ "ان اولياء ہ الاالمتقون”۔ (انفال۳۴)

آل محمدہى متقےن ہيں۔رسول اکرم۔

شواہد التنزےل۱ص۲۱۶

۴۰۔ "وقاتلوہم حتيٰ لاتکون فتنةويکون الدّين کلہ للّٰہ”۔(انفال۳۹)

دين صرف اللہ کا دين زمانہ قےام قائم عليہم السلامميں ہوگا۔امام محمد باقر عليہم السلام۔

ےنابےع المودةص۵۰۷

۴۱۔ "فان اللّٰہ خمسہ وللرسول ولذى القربيٰ”۔(انفال ۴۱)

ذوي القربيٰ سے مراد اہلبيت رسولہيں ۔امير المومنينعليہم السلام۔

شواہد التنزےل ۱ص۲۱۸

۴۲۔ "يرےدون ان يطفئوانور اللّٰہ بافواہہم وےابياللّٰہ الا ان يتم نورہ ولو کرہ الکافرون”۔ (توبہ۳۲)

نور خدا سے مراد محمد وآل محمدہے۔امير المومنين عليہم السلام۔ (ےنابےع المودةص۱۱۴)

۴۳۔ "ہو الذى ارسل رسولہ بالھديٰ ودےن الحق ليظہرہ على الدين کلہ ولوکرہ المشرکون”۔ (توبہ۳۳)

اس آيت کا مصداق قيام قائم عليہم السلامکے بعد ظاھر ہوگا۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔

ےنابےع المودة ص۵۰۸

۴۴۔ "ان عدة الشھور عنداللّٰہ اثنا عشرشہراً”۔ (توبہ۳۶)

جابر!ميرے ائمہ اہلبيت عليہم السلامکي تعدادمہينوں کى تعداد کے برابرہوگي۔رسول اکرم۔

غاےة المرام ص۲۴۴

۴۵۔ "و السابقون الاولون من المھاجرےن والانصاروالذين اتبعوہم باحسان رضى اللّٰہ عنھم و رضواعنہ”۔ (توبہ۱۰۰)

ہم اہلبيت عليہم السلامپر سبقت لے جانے والا کوئى نہيں ہے۔اميرالمومنين عليہم السلام۔

غاےة المرام ص۳۸۵

۴۶۔ "يا ايھا الذين اٰمنوا اتقوااللّٰہ و کونوا مع الصادقين "۔ (توبہ۱۱۹)

صادقےن محمدوآل محمد ہيں ۔ابن عمر۔

غاےة المرام ص۲۴۸

۴۷۔ "فقل انما الغےب للّٰہ فانتظروااني معکم من المنتظرين "۔ (ےونس ۲۰)

اس آيت ميں غےب سے مراد قائم آل محمدہيں ۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔ (ےنابےع المودة۵۰۸)

۴۸۔ "لئن اخرناعنھم الغےب اليٰ امة معدودةليقولن ما يحبسہ”۔ (ہود۸)

امت مادودہ سے مراد ۳۱۳اصحاب قائم آل محمدہيں ۔امام محمد باقر عليہم السلاموامام جعفرصادق عليہم السلام۔

ينابےع المودة۵۰۸

۴۹۔ "بقية اللّٰہ خےر لکم”۔ (ہود۸۶)

بقية اللّٰہ قائم آل محمدکى ہستى ہے۔امام محمد باقر عليہم السلام۔ (نورالابصار۱۷۲)

۵۰۔ "وانالموفوہم نصيبھم غےر منقوص”۔ (ہود ۱۰۹)

ان افراد سے مراد بني ہاشم ےعنى آل محمدہيں ۔ابن عباس۔

شواہد التنزےل ۱ص۳۸۲

۵۱۔ "فلولاکان من القرون من قبلکم اولوا بقية ينھون عن الفساد فى الارض”۔(ہود ۱۱۶)

يہ آيت ہم اہلبےت عليہم السلامکے بارے ميں نازل ہوئى ہے۔زيد بن عليعليہم السلام۔ (شواہد التنزيل ۱ص۲۸۴)

۵۲۔”قل ھذہ سبيلى ادعوا الى اللّٰہ على بصےرةاناومن اتبعني”۔ (ےوسف۱۰۸)

يہ اتباع کرنے والے ائمہ آل محمدہيں۔رسول اکرم ۔

شواہد التنزيل ۱ص۲۸۶

۵۳۔ "حتيٰ اذااستيئس الرسل و ظنواانہم قد کذبواجاء ہم نصرنا”۔ (ےوسف ۱۱۰)

نصرت الٰہى قےام قائم عليہم السلام کے وقت آئے گي۔اميرالمومنين عليہم السلام۔

ےنابےع المودة ص۵۰۹

۵۴۔ "انما انت منذر و لکل قوم ہاد۔”

رعد۔۷

ہادى سے مراد امام ہر زمانے کا امام ہے۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔

ينابيع المودة،ص/۱۰۰

۵۵۔ "الذين آمنوا و تطمئن قلوبہم بذکر اللہ۔” (رعد۔۲۸)

ان سے مراد محبان آل محمد ہيں۔رسول اکرم۔ (در منثور/۴،ص/۵۸)

۵۶۔ "الذين آمنوا و عملوا الصالحات طوبيٰ لہم و حسن مآب۔” (رعد۔ ۲۹)

طوبيٰ ايک درخت ہے جس کى اصل خانہ عليعليہم السلام ميں ہے۔ ابن عباس۔ (غاية المرام،ص/۳۹۲)

۵۷۔ "و ذکّر ہم بايّام اللہ۔” (ابراہيم۔۵)

ايّام اللہ روز قيام قائم، روز جنت اور روز قيامت ہے۔صادقينعليہم السلام۔

ينابيع المودة،ص/۵۰۹

۵۸۔ "اٴ لم تر کيف ضرب اللہ مثلاً کلمة طيبة کشجرة طيبة۔” (ابراہيم ۔۲۴)

شجرہ ذات پيغمبر ہے۔ فرع على ہيں۔ شاخ زہرا ہيں اور ثمرات حضرات حسنينعليہم السلام ہيں۔ امام محمد باقرعليہم السلام۔ (شواہد التنزيل/۱ص/۳۱۱)

۵۹۔ "اٴلم تر اليٰ الذين بدلوا نعمة اللہ کفراً واحلوا قومہم دار البوار۔” (ابراہيم۔۲۸)

نعمت محمد وآل محمد ہيں ان تبديل کرنے والے بنى اميہ ہيں۔ مجاہد۔

غاية المرام،ص/۳۵۶

۶۰۔ "قال فانک من المنظرين اليٰ يوم الوقت المعلوم۔” (حجر۔ ۳۶)

زمانہ قيام قائم آل محمد ہى مراد ہے۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔ (ينابيع المودة،ص/۱۰۹)

۶۱۔ "و نزعناما فى صدورہم من غل اخوانا عليٰ سرر متقابلين۔” (حجر۔۴۷)

يہ آيت عليعليہم السلام، حمزہ، جعفر، وغيرہ کے بارے ميں ہے۔ابن عباس۔

شواہد التنزيل،۱ص/(۳۱۷)

۶۲۔ "ان فى ذٰلک لاٰيات للمتوسمين۔” (حجر۔۵۷)

متوسمين ميں رسول اکرم،حضرت على اور ديگر آئمہ اطہار شامل ہيں۔ امام جعفر صادقعليہم السلام۔

شواہد التنزيل،۱ص/(۳۲۷)

۶۳۔ "و على اللہ قصد السبيل۔” (نحل۔۹)

ہم اہلبيتعليہم السلام ہر اقتدار کرنے والے کے لئے سبيل حق ہيں۔امام محمد باقر۔ (غاية المرام، ص/۲۴۶)

۶۴۔ "وعلٰمٰتٍ و بالنجم ہم يہتدون۔” (نحل۔۱۶)
نجم رسول اکرم ہيں اور علامات اولياء رسول ۔امام محمد باقرعليہم السلام۔ (شواہد التنزيل،۱ص/(۳۲۷

۶۵۔ "فاسئلوا اہل الذکر ان کنتم لا تعلمون۔” (نحل۔(۴۳
اہل ذکر ہم اہل بيتعليہم السلام ہيں۔ امام محمد باقرعليہم السلام۔

جامع البيان فى تفسير القرآن،۴۱،(ص/۱۰۸)

۶۶۔ "يعرفون نعمةاللّٰہ ثم ينکرونھا واکثرہم الکافرون”۔

نحل(۸۳)

ہم اہلبيت ايک نعمت پروردگار ہيں۔امام محمدباقر عليہم السلام۔

غاية المرام ص(۲۴۶)

۶۷۔ "کل انسان الزمناہ طائرہ فى عنقہ”۔

اسراء(۱۳)

طائر ولاےت امام وقت کي طرف اشارہ ہے۔امام جعفر صادق عليہم السلام۔

ےنابےع المودة ص(۴۵۴)

۶۸۔ "واٰت ذاالقربيٰ حقہ”۔

اسراء (۲۶)

ذوي القربيٰ سے مراد ہم اہلبيت عليہم السلامہيں۔امام زين العابدين۔

غاےة المرام ص (۳۲۳)

۶۹۔ "و من قتل مظلوماًفقد جعلنا لوليہ سلطاناًفلايسرف في القتل انہ کان منصوراً”۔

اسراء(۳۳)

يہ آيت امام حسن عليہم السلاماور امام مہديعليہم السلام کى طرف اشارہ ہے۔امام رضاعليہم السلام۔

ےنابےع المودة ص(۵۱۰)

۷۰۔ "ےوم ندعو کل اناس بامامہم”۔

اسراء(۷۱)

ائمہ حق على عليہم السلام اور اولاد عليعليہم السلام ہيں۔ابن عباس ۔

غاےة المرام ص(۲۷۲)

۷۱۔ "واذ قلنا للملٰئکة اسجدوا لآدم۔”

کہف۔(۵۰)

آدمعليہم السلام نے اپني ذريت ميں مجھے اور ميرى اولاد کو ديکھ کر سجدہ شکر کيا تو خدا انھيں مسجود ملائک بنا ديا۔رسول اکرم۔

غاية المرام،ص(۳۹۳)

۷۲۔ "وامامن اٰمن و عمل صالحاً جلہ جزاء الحسنيٰ۔”

کہف۔(۸۸)

مومنين رسول اور آل رسول پر ايمان لانے والے ہيں۔ رسول اکرم۔

غاية المرام،ص((۵۸۴

۷۳۔ "کآہٰيٰعآصآ۔”

مريم۔(۱)

کاف کربلا،ھا# ہلاکت عترت، يا يزيد، ع عطش حسينعليہم السلام، ص صبر حسينعليہم السلام ہے۔

)ينابيع المودة(

۷۴۔ "ان الذين اٰمنوا و عملوا الصٰلحٰت سيجعل لہم الرحمٰن ودّا۔”

مريم۔(۹۶)

اس سے مراد محبان آل محمد ہيں۔محمد حنفيہ۔

اسعاف الراغبين،ص(۱۰۹)

۷۵۔ "وافى لغفار لمن تاب و اٰمن و عمل صالحاً ثم اہتديٰ۔”

طہ۔(۸۲)

ہدايت ولايت اہل بيتعليہم السلام کے راستہ پر آجانا ہے۔ امير المومنينعليہم السلام۔

ينابيع المودة،ص (۱۱۰)

۷۶۔ "يومئذ لا تنفع الشفاعة الا من اذن لہ الرحمن و رضى لہ قولاً۔”

طہ۔ (۱۰۹)

جو ميري آل پر صلوات پڑھے ميں روز قيامت اس کى شفاعت کروں گا۔ رسول اکرم۔

)فضائل الخمسہ(

۷۷۔ "واٴمر اہلک بالصلٰوة و اصطبر عليہا۔”

طہ۔(۱۳۲)

نتیجہ

مذکورہ مباحث سے آسانی کے ساتھ یہ بات سمجھی جا سکتی ہے کہ قرآن کے اندر اہل بیت ع کے بے پناہ فضائل بیان ہوے ہیں اگر سارے فضائل کو ایک جگہ جمع کر دیا جاے تو کئی جلد کتاب وجود میں آ جایئں گی اسی لئے ہم نے مختصر طور پر بیان کیا ہے۔