قرآن کا سياسي نظام
logo512-articles

Abstract

By قرآن کا سياسي نظام

انساني زندگي کے مختلف تاريخي ادوار نے ثابت کيا ھے کہ انساني معاشرے سے وابستہ امور کي تدبير اور سياست پر خاص توجہ رکھنا چاھئے ، کيونکہ معاشرے کے نظام کو عقل و رسم و رواج اور شرع نے موضوع بحث قرارديا ھے اور ان ميں سے ھر ايک کے تقاضے کي بنا پر انساني معاشرے کا نظام تيار ھوا ھے.

سياست اور نظم و نسق کا مسئلہ اسلام ميں دوسرے اديان سے کھيں زيادہ اھم اور نماياں ھے ? اسلامي احکام و قوانين پر طائرانہ نظر ڈالنے سے بھي يقين ھوجاتا ھے کہ سياست کو شرع مقدس سے جدا نھيں کيا جا سکتا کيونکہ شرع کے تار و پود ميں سياست مضمر ھے ?

حکومت ، ولايت ، امر بہ معروف ، نھي عن المنکر ، جھاد ، دفاع ، قضاوت ، شھادات ، حدود ، قصاص ، تجارت ، معاملات ، نا بالغوں ، يتيموں اور مجانين کي ولايت ، سماجي اور گھريلو حقوق ، تربيتي اور ثقافتي امور ، اقتصادي مسائل ، زکو?ة ، خمس ، غنائم ، ذمّي اور اھل کتاب کے احکام ، دوسري ملتوں سے امت مسلمہ کے تعلقات ، جنگ و صلح اور اسي طرح کے دوسرے مسائل ان فقھي اور اسلامي معارف کے زمرے ميں شامل ھيں جنھيں معاشرے کي سياست و تدبير سے عليحدہ نھيں کيا جا سکتا ? يھاں تک کہ عبادات ميں سے حج ، نماز جمعہ اور جماعت وغيرہ کا تعلق سياست سے قابل توجہ ھونے کے ساتھ ساتھ ناقابل جدائي ھے ?

پيغمبر اسلام کي سيرت اور سياست دونوں ايک کھلي کتاب کے مانند ھيں ، جو تمام مسلمانوں کے لئے مشعل راہ ھے. يہ کھنا غلط ھے کہ رسول خدا محض عبادات ، اعتقادات کي تعليم اور لوگوں کي تربيت و ھدايت ھي کرتے رھے . اسلامي ملک کي اندروني و بيروني سياست سے ان کا کوئي واسطہ نہ تھا ! مختلف ملکي سر براھوں کے نام ا?نحضرت کے خطوط ، عملي طور پر ظالم و جابر افراد کے خلاف اقدامات ، شيطاني سياست اور سياست مداروں سے ٹکر ، باطل کے خلاف جنگ ميں لوگوں کو جمع کرنا ، مسند قضاوت پر بيٹھنا ، (عدل و انصاف قائم کرنا ) اور تمام سماجي امور ميں رھنمائي کرنا……ايسے رويّے اور طور طريقے ھيں جن کو پيغمبر کي سنت و سيرت سے جدا نھيں کيا جاسکتا ? لھذا سياسي مسائل کي اھميت ، ان کا شريعت سے تعلق ، اور باني ?اسلام کي ان معاملات ميںبراہ راست رھنما ئي ، نيز اسلامي معاشرے کي ھدايت کي ذمہ داري نہ صرف عقل و شرع کے بديھي امور ميں شمار کي جاتي ھے بلکہ ان ميں ابھام کي کوئي گنجائش نھيںھے۔

سياست کا مفھوم اور حيات انساني ميں اس کامقام

لفظ سياست کے مروجّہ معنوں اور دنيا کے دھوکے باز سياسي رھنماؤں کے عمل کو مد نظر رکھتے ھوئے يہ بات کھي جا سکتي ھے کہ لفظ سياست کے معنوں ميں اتني تحريف کي گئي ھے کہ ا?ج دنيا ميں جو کچہ ھو رھا ھے وہ اس لفظ کے لغوي و حقيقي معنوں سے تضاد رکھتا ھے.يہ بات ھم کو مجبور کرتي ھے کہ ھم سب سے پھلے لفظ سياست کے مفھوم کي توضيح پيش کريں.اس کے بعد سياسي نظام کے ابعاد اور قرآني نقطہ نظر سے اس کے مقاصد پر روشني ڈاليں

لغت اور اسلامي کتابوں کے ماخذ اور متون ميں مندرج لفظ سياست کے معنوں پر غور کرنے سے يہ مستفاد ھوتاھے کہ سياست کے حقيقي معني ، انساني معاشرے ، ملک اور عوام کي سر پرستي و قيادت کے ان ابعاد پر مشتمل ھيں ، جن کے ذريعہ ان کي فلاح و بھبود اور ترقي کي ضمانت ملتي ھے، لفظ سياست پر مشتمل تشريحات کو لغت کي بعض کتابوں نے درج کيا ھے :

مجمع البحرين

ساس ، يسوس ، الرعيہ ، امرھا و نھاھا ، سياست کے معني ، عوام پر احکام جاري کرنے اور پابندي عائد کرنے کے ھيں ? حديث ميںھے : ” ثم فوض الي النبي امر الدين و الامة ليسوس عباد“ ” دين اور امت مسلمہ سے وابستہ امور کي ذمہ داري پيغمبر اسلام کو سونپي گئي تاکہ لوگوں کو سياست اور راھنمائي کريں۔

دائرة المعارف بستاني

ساس القوم ، دبرھم و تولي امرھم الامر : قام بہ ، فھو ساس السياسة : استصلاح الخلق بار شاد ھم الي الطريق المنجي في العاجل او الاجل السياسة المدينة : تدبير المعاش مع العموم علي سنن العدل و الاستقامہ “

کسي معاشرے کي سياست کرنا : ان کے امور کي تدبير اور ان کے تقاضوں کا جواب دينے کے ساتھ ساتھ عدل و انصاف و رھنمائي کے معاملات کو آزادي سے بجالاناھے سياست مدن : يعني معاشرے کي معيشت ،عدل و انصاف اور آزادي کے اصولوں پر فراھم کرنا ۔

عربي لغت ، لاروس

ساس الوالي الرعيہ : ”تولي امرھاواحسن النظر اليھا “ حاکم نے رعايا کي سياست کرنے کي ذمہ داري قبول کي : يعني عوام کے تمام کارو بار کي ذمہ داري قبول کر کے ان کي فلاح و بھبود کے لئے سوچا ۔

منجد الطلاب

” منجد الطلاب “ کے ترجمے ميںبھي سياست کي اس طرح تعريف کي گئي ھے مملکت داري، عوام کے امور کي اصلاح ، ملکي کار وبار کا انتظام ، اور سياست مدن يعني معاشرے کو سياست کرنا ۔

معين معين

فارسي معين معين ’ ’معين “ ميں سياست مذکورہ بالا معنوں کے علاوہ حسب ذيل معني بھي درج کئے گئے ھيں ” قضاوت ، عدالت ، سزا ، جزا ، تنبيہ ، ملک کي سرحدوں کي حفاظت اور ملک کے داخلي اور خارجي امور کا انتظام ۔

اخوان الصفا

اسي طرح ” اخوان الصفا “ کتاب کے حوالے سے سياست کے کئي بُعد بتائے جاتے ھيں ? اقتصادي سياست ، سياست مدن اور جسماني سياست جو بدن کو قوت بخشنے اور اس کي حفاظت کرنے کے علاوہ اسے توازن اور حد اعتدال سے خارج ھونے سے روکتي ھے ? ” اخلاق ناصري “ کتاب سے نقل کيا گيا ھے کہ سياست فاضلہ کو امامت کھتے ھيں ? اور اس سے مراد تکميل خلق ھے جو سعادت کے حصول کے لئے ضروري اور لازمي ھے۔

حکمت کی تقسيم

علمي اور عقلي مباحث ميں حکماء و فلاسفہ نے حکمت کو دو حصوں ميں تقسيم کيا ھے:

حکمت نظري: اس علم کو کھتے ھيںجس کے ذريعہ عقل انساني اپني قدرت و توانائي کے مطابق جو موجودات کے حقيقي حالات کے بارے ميںعلم رکھتي ھو۔

حکمت عملي :جس کو تين حصوں ميں تقسيم کيا گيا ھے :

(۱ )اخلاق يعني خود سازي

(۲)تدبير منزل يعني گھريلو امور کي تنظيم

(۳) سياست مدن يعني شھري اور ملکي پيمانے پر تشکيل حکومت تاکہ انساني اجتماع کے مسائل و مشکلات کو حل کيا جائے

مذکورہ مفاھيم اور آج کي دنيا ميں رائج سياست اور سياسي رھنماؤں کي منطق کے درميان مکمل تضاد ھے ، اس لئے کہ ان لوگوں نے عوامي مصلحت ، ترقي اور سر حدوں کي حفاظت کے بجائے اپني سياست کي بنياد ، مکاري ، قتل و غارت گري ، جاہ طلبي ، رياست اور وسعت طلبي ،نيز محروموں کو غلامي کي زنجيروں ميں جکڑنے پر رکھي ھے. يہ عوام دشمن غريبوں کو موت کے حوالے کرنے ، انھيں علمي ، فني اور فکري افلاس کے حوالے کرنے کو نصب العين بنائے ھوئے ھيں ? ظاھر ھے اس سياست کي دين، ضمير اور عقل ميں کوئي گنجائش نھيں .

اب تک سياست کے مختلف معني جو ھم ذکر کرتے چلے آئے ھيں اورجن معنوں پر مصلح اور دانشور افراد غور و فکر کرتے رھے ھيں ، وہ انسان کي ضروريات زندگي سے وابستہ ھيں اور بے شک اسلام اور دوسرے اديان نے اس کي نسبت خاص اھتمام کيا ھے اور کبھي اس پر غور و فکر کرنے سے منع نھيں کياھے

اگر محض قرآني نقطہ نظر سے انبياء عليھم السلام کي سيرت کا مطالعہ کيا جائے تو يہ بات سامنے ا?تي ھے کہ انسانوں کے حقيقي اور سچے رھنما اور اللہ تعالي کے پيغمبروں (ع) نے عوامي معاملات کي بھلائي کے لئے کس قدر جانفشاني کي ھے ، خاص طور پر سياست ، رھبري اور اصلاح کے لحاظ سے ان کي خدمات مثالي ، قابل تحسين و قابل عمل و پيروي ھيں

دو طرح کے سر براہ

بے جانہ ھو گا اگر يھاں ايک خاص نکتے کي طرف توجہ مبذول کرتے چليں کہ قرا?ن مجيد نے دو طرح کے سر براھوں کا ذکر کيا ھے ?الھي رھبراور شيطاني سربراہ جو ايک دوسرے کي مخالف جھت ميں چلتے رھے ھيں ? قرا?ن ميں جھاں بھي ان دونوں طرح کے سربراھوں کا ذکر ھوا ھے وھاں ان کے حکمراني کے طريقوں کي بھي وضاحت کي گئي ھے ، بعنوان مثال :

سليمان (ع) اور بلقيس کے سلسلے ميں يوں بيان ھواھے :

” قالت ان الملوک اذا دخلوا قرية افسد و ھا وجعلوا اعزة اھلھا اذلة و کذلک يفعلون “(?)

اس نے کھا کہ بادشاہ جب کسي علاقہ ميں داخل ھوتے ھيں تو بستي کو ويران کرديتے ھيں اور صاحبان عزت کو ذليل کرديتے ھيں اور ان کا يھي طريقہ کار ھوتا ھے ?

اگر چہ يہ ا?يت بلقيس کي ترجماني کر رھي ھے ، ليکن اس بات کو مد نظر رکھتے ھوئے کہ قرا?ن مجيد جب کبھي کسي بات کو درج کر کے رد نھيں کرتا تو اس کا حکم دستخط اور تصديق کے برابر ھے ? اس سے يہ نتيجہ اخذ کيا جا سکتا ھے کہ بادشاہ بنيادي طور پر اسي طرح کے ھوتے ھيں، يعني مفسد ، تباہ کار ، گمراہ کن اور غاصب

حضرت موسي? (ع) اور حضرت خضر (ع) سے متعلق کشتي کا واقعہ بيان ھوا ھے ? وھاں حسب ذيل آيت ھے :

” ام السفينة فکانت لمساکين يعملون في البحر فا?ردت ان اعيبھا و کان و راء ھم ملک ياخذ کل سفينة غصبا “

جھاں تک اس کشتي کي بات ھے تو اس کا تعلق ان غريب افراد سے تھا جو دريا ميں کام کرتے تھے ? ميں نے اس کشتي ميں سوراخ اس لئے کرنا چاھا تھا ،کہ ان پر ايک ايسے بادشاہ کا تسلط تھا جو کشتيوں کوھتھيا ليتا تھا

قرآن ميں مسرفين ، مستکبرين ، مفسدين اور مترفين جيسي تعبيريںطاغوتوں اور صاحب مال و قدرت سربراھوں کےلئے بارھا استعمال ھوئي ھيں

حقيقي سر براھوں کي خصوصيات

قران ميں ايسے واقعات بھي ھيں جن ميں ايسے سر براھوں کا ذکر ھے جنھوں نے عوام کي مصلحت کو مد نظر رکھتے ھوئے صحيح اقدامات کئے ھيں:

ايک واقعہ تو وھي ھے جب بني اسرائيل نے اپنے ايک نبي سے درخواست کي تھي کہ انھيں ايک ايسا فرما نروا اور سر براہ ديا جائے جو ان کو ساتھ لے کر دشمن سے مقابلہ کر سکے :

” وقال لھم نبيھم ان اللہ قد بعث لکم طالوت ملکا قالوا اني يکون لہ الملک علينا ونحن احق بالملک منہ و لم يؤت سعة من المال قال ان اللہ اصطفہ عليکم و زادہ بسطة في العلم وا لجسم و اللہ يؤتي ملکہ من يشاء و اللہ واسع عليم “ (?)

” ان کے پيغمبر نے کھا اللہ نے تمھارے لئے طالوت کو حاکم مقرر کيا ھے .ان لوگوں نے کھا کہ يہ کس طرح حکومت کريں گے ان کے پاس تو مال کي فراواني نھيں ھے ان سے زيادہ تو ھميں حقدار حکومت ھيں نبي نے جواب ديا کہ انھيں اللہ نے تمھارے لئے منتخب کيا ھے اور علم و جسم ميں وسعت عطا فرمائي ھے اور اللہ جسے چاھتا ھے اپنا ملک دے ديتا ھے کہ وہ صاحب وسعت بھي ھے اور صاحب علم بھي ھے

يہ آيت ان افراد کے افکار و خيالات کي ترديد کرتي ھے جو سربراھي کے لئے مال و ثروت کو ضروري سمجھتے ھيں اور ايک ايسے معيار سے ا?شنا کراتي ھے جو کسي فرد کي حاکمانہ لياقت و قابليت کا ثبوت فراھم کرتا ھو ، يھاں علم و قدرت کواستحقاق فرمانروائي کا معيار قرار ديا گيا ھے ۔

اس آیه مبارکہ ميں ايک بھت لطيف نکتہ يہ ھے کہ جو سر براھي قابليت اور صلاحيت کي بنيادوں پر مستحکم ھوتي ھے وہ الطاف باري تعالي? سے سر شار ھوتي ھے اور خدا وند کريم سوائے ان لوگوں کے جو اھليت رکھتے ھيں ھر کس و ناکس کو اس عطيہ سے نھيں نوازتا ، اس لئے کہ يہ عطيہ وھي مالکيت مالک الملک ھے جو لائق و شايستہ سربراہ کي ملکيت ميں ديا جاتا ھے ورنہ انسان کوحق نھيں ھے کہ وہ علم ، قدرت اور اپني سربراھي پر ناز کرے ، اس لئے کہ قدرت اور علم در حقيقت ابتداء خدا وند کريم کے لئے ھے پھر کھيں انسان تک اس کي رسائي ھوتي ھے

”قل اللھم مالک الملک توتي الملک من تشاء و تنزع الملک ممن تشاء و تعز من تشاء و تذل من تشاء بيدک الخير انک علي کل شئي قدير “ ( ?)

پيغمبر آپ کھئے کہ خدا يا تو صاحب اقتدار ھے جس کو چاھتا ھے اقتدار ديديتاھے اور جس سے چاھتا ھے سلب کرليتا ھے ? جس کو چاھتا ھے عزت ديتاھے اور جس کو چاھتا ھے ذليل کرتا ھے ? سارا خير تير ے ھاتھ ميں ھے اورھي ھر شہ پر قادر ھے

سورہ بني اسرائيل ميں طالوت و جالوت کے درميان جنگ کے واقعات اس طرح بيان کئے گئے ھيں :

” فھزموھم باذن اللہ و قتل داود جالوت و ا?تاہ اللہ الملک و الحمکة و علمہ مما يشاء “ (?)

نتيجہ يہ ھوا کہ ان لوگوں نے جالوت کے لشکر کو خدا کے حکم سے شکست ديدي اور داؤد نے جالوت کو قتل کرديا اور اللہ نے انھيں ملک اور حکمت عطاکردي اور اپنے علم سے جس قدر چاھا ديديا ?

اسي طرح يہ ا?يت حکومت کے اقتدار و مدارج کے ساتھ ساتھ علم اور حکمت پر زور ديتے ھوئے ذمہ داريوں ميں سے ايک ايسي ذمہ داري کي طرف بھي اشارہ کرتي ھے جو ال?ھي سر براھوں کے ذمے ھوتي ھے ، مثلا دشمنان خدا سے مقابلہ کرنا….. اس بحث کو حکومت کے سياسي مسائل اور فرائض کے ضمن ميں بيان ھونا چاھئے

قرا?ن کريم ميں ايسے پيغمبروں کے نام بھي درج ھيں جو مقام نبوت کے علاوہ معاشرتي ثقافت و سياست کے فرائض بھي انجام ديتے تھے ، ان ميں سے پيغمبر داؤد ، سليمان ، يوسف اور ذو القرنين عليھم السلام کے نام قابل ذکر ھيں

” يا دا و?د انا جعلناک خليفةفي الارض فاحکم بين الناس بالحق و لا تتبع الھوي? فيضلک عن سبيل اللہ “ ( ?)

اے داؤد ھم نے تم کو زمين پر اپنا جانشين بنايا ھے ، لھذا لوگوں کے درميان جن کے ساتھ فيصلہ کرو اورخواھشات کا اتباع نہ کرو کہ وہ راہ خدا سے منحرف کرديں بيشک جو لوگ رارہ خدا سے بھٹک جاتے ھيں ان کے لئے شديد عذاب ھے کہ انھوں نے روز حساب کو يکسر نظر انداز کرديا ?

” و ورث سليمان داو?د و قال يا ايھا الناس علمنا منطق الطير و اوتينا من کل شئي ان ھ?ذا لھو الفضل المبين “ ” و حشر لسليمان جنود ہ من الجن و الانس و الطير فھم يوزعون “ (?)

” اورپھر سليمان داؤدکے وراث ھوئے اور انھوںنے کھا کہ لوگوںمجھے پرندوں کي باتوں کا علم ديا گياھے اورھر فضيلت کا ايک حصہ عطا کيا گيا ھے اور يہ خدا کا کھلا ھوا فضل وکرم ھے اور سليمان کے لئے ان کا تمام لشکر جنات انسان اورپرندے سب اکٹھا کئے جاتے تھے تو بالکل مرتب منظم کھڑے کردئے جاتے تھے

تفسير صافي ميں مجمع البيان سے اور مجمع البيان ميں امام جعفر صادق (ع) سے روايت ھے کہ حضرت سليمان (ع) کي حکومت کا دائرہ مشرق سے ليکر مغرب تک پھيلا ھوا تھا ? انھوں نے زمين پر بسنے والے تمام جن و انس ، شياطين ، چرند و پرند اور وحشي جانوروں پر سات سو سال سے زيادہ حکومت کي تھي

” و قال الملک ائتوني بہ استخلصہ لنفسي فلما کلمہ قال انک اليوم لدينا مکين امين “

” قال اجعلني علي خزائن الارض اني حفيظ عليم “ ” و کذلک مکنا ليوسف في الارض يتبوا منھا حيث يشاء نصيب برحمتنا من نشاء و لا نضيع اجر المحسنين “ ( ?)

اور بادشاہ نے کھا کہ انھيں سے آؤ ميں اپنے ذاتي امور ميں ساتھ رکھوں گا اس کے بعد جب ان سے بات کي تو کھا کہ تم آج ھمارے دربار ميں باوقار امين کي حيثيت سے رھو گے پھريوسف نے کھا مجھے زمين کے خزانوں پر مقرر کردو کہ ميں محافظ بھي ھوں اور صاحب علم بھي اور اس طرح ھم نے يوسف کو زمين ميں اختيار دے ديا کہ وہ جھاں چاھيں رھيں ھم اپني رحمت سے جس کو بھي چاھتے ھيں مرتبہ دے ديتے ھيں اور کسي نيک کردار کے اجر کو ضائع نھيں کرتے

حضرت يوسف (ع) مصر کے زندان ميں بھي لوگوں کي بري حالت اور حکومت وقت کے فتنہ و فساد سے با خبر تھے انھوں نے مصر ي عوام پر حکمراں سياسي نظام کو ختم کر کے انھيں امن و انصاف مھيا کرنے کي فکر ميں کوئي فروگذاشت نھيں کي ?جس وقت وہ بادشاہ کے خواب کي تعبير بيان کرنے کے سلسلے ميں بے گناہ قيدي کي حيثيت سے پھچانے گئے ، بادشاہ نے ان کے چھرہ? مبارک پر دانشمندي و بيدار مغزي کے ا?ثار ديکھے تو ? وہ چاھتا تھا کہ ملک و ملت کي شہ رگ يعني ملک کي اقتصادي سياست کي ذمہ داري انھيں سونپ دے? اس اھم نکتے سے چشم پوشي نھيں کرنا چاھيے کہ اقتصادي سياست پر ملک کے سارے نظام اور عوام کے مستقبل کا دار و مدار ھوتا ھے ? ملک کي سياست سنبھالنے کے سلسلے ميں حضرت يوسف (ع) کے اقوال ميںسے ايک اور اھم نکتہ سامنے ا?تا ھے جو دو بنيادي شرطوں پر مبني ھے ? ايک ” حفيظ “ يعني محافظ ، امانت دار اور قابل اعتماد ھونا ، دوسري شرط ” عليم “ يعني ملکي منافع ، مال و دولت ، ذخيروں اور سياست دولت سے با خبر ھونا ھر سر براہ کے لئے شرط لازم ھے ?

آيا حضرت آدم (ع) کي خلافت و حکومت ميں علم و امانت کے سوا اور کوئي دوسرا محور تھا ؟

” و علم آدم الاسماء کلھا “ ” انا عرضنا الامانة……… وحملھا الانسان “

جو شخص ان دونوں صفتوں سے محروم رھا وہ يقيني طور پر ” ظلوم و جھول “ يعني نادان و ستمگر ٹھھرا .انسانيت پر اب تک جتنے مصائب گذرے ھيں و ہ سب انھيں نادان ا ور ستمگر افراد کے ھاتھوں گذرے ھيںجنھوں نے خلافت کي امانت غصب کر کے انساني زندگي کے نظام کو تباھي کے حوالے کر رکھا ھے

”ويسئلونک عن ذي القرنين قل سا?تلوا عليکم منہ ذکر ا انا مکنّا لہ في الارض و اتيناہ من کل شئي سببا “(?)

اے پيغمبر يہ لوگ آپ سے ذوالقرنين کے بارے ميں سوال کرتے ھيں تو آپ کھديجئے کہ ميں عنقريب تمھارے سامنے انکا تذکرہ پڑھ کر سنادوں گا ? ھم نے ان کو زمين ميں اقتدار ديا اور ھر شئي کا سازو سامان عطا کرديا ?

اس کے بعد محروم طبقوں کو نجات دلانے کے لئے ان کے مشرق و مغرب کے سفر کا ذکر ھوتا ھے ? يا جوج و ماجوج کے ظلم و ستم اور فساد کو روکنے اور مستضعفين اور محرومين کو شکنجے سے نجات دلانے کے لئے اسکندر نے دونوں طبقوں کے درميان ايک دفاعي ديوار بنانے کے لئے کچہ اقدامات کئے تھے ، اس کي مزيز تفصيل قرا?ن مجيد ا ور تفسيروں ميں تلاش کرنا چاھئے ، بنيادي نکتہ يہ ھے کہ خدا وند کريم کي جانب سے مبعوث ھونے والے اس سربراہ اور انصاف پسند حکمراں نے ( اسکندر نام کا ايک باندہ ) قائم کيا تاکہ محروموں پر حملہ ا?ور دشمن کے حملوں ميں رکاوٹ ڈال سکے اور اس قابل تعريف اقدام کو اس طرح انجام ديا جس طرح سے ايک ال?ھي سياست کا ر اور زمامدار کو انجام دينا چاھئے ?( سورہ کھف کي ?? سے ليکر ?? ا?يت تک ملاحظہ ھو )

نتیجہ

بيان کردہ واقعات و حقائق ثابت کرتے ھيں کہ تاريخ کے طويل عرصے ميں ايسے پيغمبر اور مردان حق گذرے ھيں جنھوں نے ملک اور عوام کي باگ ڈور سنبھالنے کے ساتھ ساتھ عوام کي راھنمائي اور سياست کے فرائض بھي معياري طريقے پر انجام ديے ھيں ،اور جس راہ پر سياسي کارکنوں کو چلنا اور جن اغراض و مقاصد کو پورا کرنا چاھئے ان کي نشاندھي بھي انھوں نے اس طرح سے کي ھے کہ دوسروں کے لئے بطور نمونہ باقي رھيں ۔